تازہ ترین
الیکشن ٹریبیونلز کی مایوس کن کارکرگی

الیکشن ٹریبیونلز کی مایوس کن کارکرگی

اسلام آباد: (14 جولائی 2017)بلدیاتی انتخابات کا انعقاد ہوئے دو سال گزر گئے مگر ٹریبونلز کے پاس اب بھی پندرہ سو سے زائد کیس زیر التوا ہیں ، اتنی بڑی تعداد میں التوا میں پڑے کیسز نے الیکشن ٹریبیونلز اور الیکشن کمیشن کی کارکردگی پر بڑا سوالیہ نشان پیدا کردیا ہے۔

ذرائع کے مطابق دو سال ہونے والے بلدیاتی انتخابات میں چاروں صوبوں سے کل چار ہزاردو سواڑتیس کیس فائل ہوئے جن میں سے اب بھی پندرہ سوچالیس کیس فیصلے کے منتظر ہیں۔ پنجاب میں سات سو اڑتیس جبکہ سندھ میں ایک سو ترانوے کیس الیکشن ٹریبونلز کے پاس زیر التوا ہیں۔

خیبر پختونخواہ میں پانچ سو اٹھاسی اور بلوچستان میں اکیس کیسز الیکشن ٹریبیونلز کے پاس التوا کا شکار ہیں۔ عام انتخابات دو ہزار تیرہ کے بھی کچھ کیس ابھی تک ٹریبیونلز کے پاس زیر التوا پڑے ہیں ۔

ٹریبیونلز کو قانون کے مطابق چار ماہ کے اندر کیس کا فیصلہ کرنا ہوتا ہے ۔کیسز میں التوا الیکشن ٹریبیونلز اور الیکشن کمیشن کی کارکردگی پر بڑا سوالیہ نشان ہے۔

یہ بھی پڑھئے

الیکشن کمیشن نے سعید غنی کی کامیابی کا نوٹی فیکیشن روک دیا

پی ٹی آئی نے ایک بار پھر الیکشن کمیشن کا دائرہ اختیار چیلنج کردیا

Comments are closed.

Scroll To Top