تازہ ترین
اسلام آباد:صرف 48اسپتال،تشخیصی لیبارٹریاں ٹیکس اداکرتی ہیں، وزارت صحت کی رپورٹ

اسلام آباد:صرف 48اسپتال،تشخیصی لیبارٹریاں ٹیکس اداکرتی ہیں، وزارت صحت کی رپورٹ

اسلام آباد (13جنوری، 2018)اسلام آباد میں طبی تشخیص اور ٹیسٹوں کی فیس ضابطے میں رکھنے کیلئےکوئی ادارہ موجود نہ ہونے کا انکشاف ہواہے۔وزارت قومی صحت کی دستاویزات کے مطابق ملکی دارالحکومت میں صرف 48 اسپتال،ڈائیگناسٹک لیبارٹریاں ٹیکس ادا کرتی ہیں۔

وزارت قومی صحت نے نجی طبی اداروں کے حوالے سے دستاویزات جبکہ گذشتہ 3سالوں کے دوران انکم اور سیلز ٹیکس کی مد میں ملنے والی رقم کے اعداد و شمار  قومی اسمبلی کے سامنے پیش کردیےہیں۔

قومی اسمبلی میں پیش کی گئیں دستاویزات او اعداد وشمار کے مطابق اسلام آباد کے نجی اسپتالوں میں وصول کی جانے والی مشورہ فیس کیلئے کوئی انضباطی نظام موجود نہیں جبکہ صرف48اسپتال،ڈائیگناسٹک لیبارٹریاں ٹیکس ادا کرتی ہیں۔

انکم ٹیکس کی مد میں 2015میں 21 کروڑ،2016 میں 22 کروڑ90 لاکھ اور 2017 میں ساڑھے 3کروڑ سے زائد وصول ہوئے جبکہ سیلز ٹیکس کی مد میں 2015 میں65 لاکھ،2016 میں 89 لاکھ اور2017 میں ایک کروڑ سے زائد وصول ہوئے۔

اسلام آباد کے سب سے بڑے نجی اسپتال شفاء انٹرنیشنل کی زمین سی ڈی اے نے الاٹ کی،مسلسل کوششوں کے باوجود سی ڈی اے نے خیراتی یا ادائگی کی بنیاد پر الاٹمنٹ کے بارے میں معلومات نہیں دیں۔ اس کے علاوہپاکستان میڈیکل اور ڈینٹل کونسل نے بھی شفاءا سپتال کے خیراتی ہونے کے بارے میں معلومات نہیں دیں۔

قانون کے مطابق ٹیچنگ اسپتال میں50 فیصد حصہ رہائش اور مشاورت کیلئے بلامعاوضہ چلایا جائے گا.اس کے علاوہ اگر علاج پر لیبارٹری اور ادویات کے اخراجات آتے ہیں تو مریضوں سے بغیر منافع کے وصول کیئے جائیں گے۔

یہ بھی پڑھیے:

کے پی: محکمہ صحت نے پبلک سروس کمیشن کو نرسوں کی بھرتی کی درخواست کردی

پولیو کے مکمل خاتمے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے, وزیر صحت

Spread the love

Comments are closed.

Scroll To Top