تازہ ترین
چار سالوں میں قومی ایئر لائن میں 18 طیارے شامل کئے گئے، پارلیمانی سیکریٹری قومی اسمبلی

چار سالوں میں قومی ایئر لائن میں 18 طیارے شامل کئے گئے، پارلیمانی سیکریٹری قومی اسمبلی

اسلام آباد: (24 جنوری 2018) گزشتہ چار سال سے زائد عرصے کے دوران پی آئی اے کے بیڑے میں 18 طیارے شامل کئے گئے ہیں جبکہ حکومت عملے کے بغیر اور عملے سمیت پٹے پر مزید طیارے بھی بیڑے میں شامل کرنے کاارادہ رکھتی ہے۔

یہ بات وقفہ سوالات کے دوران کابینہ سیکرٹریٹ کے پارلیمانی سیکرٹری جاوید اخلاص نے ایوان کو بتایا کہ قومی فضائی کمپنی اپنے روٹ نیٹ ورک کو بھی معقول بنارہی ہے جس کے تحت خسارے کے حامل روٹس بند کئے جارہے ہیں جبکہ خاطر خواہ آمدن کے روٹس کے لئے اضافی پروازیں متعارف کرائی جارہی ہیں۔

انہوں نے کہاکہ امریکہ کے روٹ پر بھاری نقصانات کے باعث گزشتہ سال نومبر سے اس روٹ پر پی آئی اے کی پروازیں بند ہیں۔پارلیمانی سیکرٹری ندیم عباس نے ایوان کو بتایا کہ حکومت مسافروں کی بہتر سہولتوں کی فراہمی کے لئے ریلوے اسٹیشنوں کی تزئین و آرائش پر توجہ دےرہی ہے۔کیڈ کے وزیر مملکت طارق فضل چوہدری نے بتایا کہ پاکستان انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز میں مریضوں کو جگر کی پیوند کاری کی مفت سہولت فراہم کرنے کے لئے پی ایم Grievance سیل قائم کیا گیا ہے۔

ایک توجہ دلائو نوٹس پر وزیر داخلہ نے کہا کہ وفاقی دارالحکومت کی پانی کی بڑھتی ہوئی ضروریات پورا کرنے کے لئے دریائے سندھ سے اسلام آباد تک پانی لانے کےلئے 66 ارب روپے کی لاگت کا ایک منصوبہ تیار کیا گیا ہے۔انہوں نے کہاکہ اس منصوبے پر کام رواں سال شروع ہوگا، انہوں نے کہاکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری کے تحت چین کو اس منصوبے کےلئے مالی تعاون کی درخواست کی گئی ہے۔احسن اقبال نے کہاکہ دارالحکومت میں پانی کی پائپ لائنوں کی بحالی یا تبدیلی کےلئے 40 کروڑ روپے کی لاگت کاایک اور منصوبہ بھی تیارکیا گیا ہے۔

قومی اسمبلی نے آج متفقہ طور پر ایک قرار داد کی منظوری دی جس میں اقوام متحدہ کی سلامتی کی قرار دادوں کے مطابق کشمیری عوام کی حق خود ارادیت کے حصول کےلئے منصفانہ اور قانونی جدوجہد کی حمایت کااعادہ کیا گیا ہے۔یہ قرار داد امور کشمیر کے وزیر برجیس طاہر نے پیش کی جس میں مقبوضہ کشمیر میں کالے قوانین کے نفاذ کی سخت مذمت کی گئی۔

قرار داد میں کہاگیا کہ مقبوضہ کشمیر میں آٹھ لاکھ بھارتی فوج نے حریت پسند برہان وانی سمیت ایک لاکھ کشمیریوں کو شہید کیا۔

قرار داد میں سینکڑوں کی تعداد میں حریت رہنماوں اور کارکنوں کی گرفتاری اور ان کے خلاف جعلی مقدمات کے اندراج پر تشویش ظاہر کی گئی ہے۔قرارداد میں بھارتی فوج کی کنٹرول لائن اور ورکنگ باونڈری پر جنگ بندی کی بڑھتی ہوئی خلاف ورزیوں کی بھی مذمت کی گئی ، قرار داد میں کہاگیا کہ پاکستان اپنے کشمیری بھائیوں کے شانہ بشانہ ہے اور ان کی اخلاقی اور سفارتی حمایت جاری رکھے گا۔

یہ بھی پڑھیے

قومی اسمبلی کی اسٹینڈنگ کمیٹی نے راؤ انوار کو طلب کرلیا

نقیب اللہ قتل: اسپیکرقومی اسمبلی نےایک ہفتے میں رپورٹ طلب کرلی

Spread the love

Comments are closed.

Scroll To Top