تازہ ترین
پیراڈائز لیکس کیا ہے؟

پیراڈائز لیکس کیا ہے؟

ویب ڈیسک (6 نومبر 2017) پیراڈائز پیپرز لیکس کیا ہیں، کن کن ممالک کے سب سے زیادہ نام شامل ہیں اس میں؟

گزشتہ سال پانامہ پیپرز دراصل پانامہ کی مشہور لا فرم موزیک فونسیکا کے دستاویزات پر مبنی تھے اور اب پیراڈائز پیپرز لیکس سنگا پور اور برمودا کی 2 کمپنیوں سے حاصل کی دستاویزات ہیں۔ پیراڈائز پیپرز پہلے جرمن اخبار نے حاصل کیے اور پھر اسے آئی سی آئی جے کے ساتھ شئیر کیا گیا۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق اب جاری ہونے والی رپورٹ پیراڈائز پیپرز کمپنی ’ایپل بائی‘ کی دستاویز پر مشتمل ہیں۔ پانامہ پیپرز میں 50 ممالک کے 140 نمایاں افراد کے نام منظر عام پر آئے تھے۔ 376 صحافیوں نے پانامہ لیکس میں 1 کروڑ 15 لاکھ دستاویزات تیار کی تھیں۔

ان میں 180 ممالک کی 25 ہزار سے زائد کمپنیاں، ٹرسٹ اور فنڈز کا ڈیٹا شامل ہے۔ جبکہ پیراڈائز پیپرز میں 47 ممالک کے 127 نمایاں افراد کے نام شامل ہیں۔ پیراڈائز لیکس میں 1 کروڑ 34 لاکھ دستاویزات شامل ہیں اور اس کام کے لیے 67 ممالک کے 381 صحافیوں کی خدمات حاصل کی گئیں۔

1950سے لے کر 2016 کا ڈیٹا پیراڈائز پیپرز میں شامل ہے۔ امریکیوں کا نام پیراڈائز پیپرز میں سب سے زیادہ آیا ہے۔ ان کی تعداد 25ہزار 414 بتائی جاتی ہے۔ 12 ہزار 707 برطانوی شہری ایسے ہیں جن کا نام پیرا ڈائز پیپرز میں شامل ہے۔ ہانگ کانگ کے 6 ہزار 120 شہری، چین کے 5 ہزار 675 شہری اور برمودا کے 5 ہزار 124 شہریوں کا نام پیرا ڈائز پیپرز میں ہے۔

پیراڈائز لیکس میں امیتابھ بچن اور سنجے دت کی بیوی سمیت 714 بھارتیوں کے نام بھی آف شور کمپنیوں میں سامنے آئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیئے

پیراڈائز پیپرز میں 714 بھارتی شہریوں کے نام

پانامہ کے بعد پیراڈائز لیکس نے دنیا بھر میں تہلکہ مچادیا

Comments are closed.

Scroll To Top