تازہ ترین
پولیو ورکرز کی فرض شناسی کی ایک اور مثال قائم

پولیو ورکرز کی فرض شناسی کی ایک اور مثال قائم

ایبٹ آباد:(07 فروری 2019) ملک کے بالائی علاقوں میں فرض سناشی کے ایک اور مثال سامنے آئی ہے، جہاں شدید موسمی حالات کو پس پشت ڈالتے ہوئے پولیو ورکرز اپنے فرائض ذمے داری نبھارہے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق ایبٹ آباد میں محکمہ صحت کے ورکرز گلیات اور ٹھنڈیانی میں گھرگھر بچوں کو قطرے پلارہے ہیں، جہاں شدید موسمی حالات ہیں اور کئی علاقوں میں دو سے تین فٹ تک برف پڑ چکی ہے جبکہ برفباری کا سلسلہ تاحال جاری ہے۔

تاہم شدید موسمی حالات کے باوجود یہ پولیو ورکرز ملک سے پولیو کے خاتمے کا عزم لئے اپنے فرائض استقامت کے ساتھ سر انجام دے رہے ہیں۔

اس سے قبل سوات کے ایک پولیو ورکرکی ویڈیوسوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تھی جس نے پولیو کے خلاف جنگ میں برف پوش پہاڑوں کے محاذ کو سر کر کے مثال قائم کی تھی۔

سوات کے پسماندہ اور دشوار گزارعلاقہ چیل مدین سے تعلق رکھنے والے پولیو ورکر عرفان اللہ نے پولیومہم کے دوران علاقہ بشیگرام میں چار فٹ برف اور شدید سردی میں اپنی ڈیوٹی انجام دی اور وہاں جا کر بچوں کو پولیو کے قطرے پلائے تھے۔

تئیس سالہ عرفان اللہ کی یہ ویڈیو وائرل ہونے کے بعد عالمی ادارہ برائے صحت یونیسیف نے بھی اس پولیو ورکر کی تصویر ٹویٹر پر شیئر کرتے ہوئے ان کی حوصلہ افزائی کی تھی۔

بعد ازاں سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر دئیے گئے پیغام میں وزیراعظم عمران خان نے پولیو ورکرز کو سلام پیش کرتے ہوئے کہا تھا کہ پولیو ورکرز شدید ترین سرد موسم میں بھی فرائض انجام دے رہے ہیں،عرفان ان 2 لاکھ 60 ہزار ہیروز میں شامل ہیں جو ہر قسم کے موسم کی پروا کیے بغیر اپنے فرائض انجام دیتے ہیں۔

اس سے قبل وزیراعظم عمران خان نے سوات کی برف پوش پہاڑوں میں اپنے فرائض انجام دینے والے پولیو ورکرزسے ملاقات میں انہیں زبردست خراج تحسین پیش کیا تھا۔

Comments are closed.

Scroll To Top