تازہ ترین
وزیر خارجہ کا جنرل اسمبلی میں کیا جانے والا مکمل خطاب

وزیر خارجہ کا جنرل اسمبلی میں کیا جانے والا مکمل خطاب

نیویارک:(30 ستمبر 2018) وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان پڑوسی ممالک کے ساتھ برابری کی سطح پر تعلقات چاہتا ہے۔

وزیر خارجہ نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کے آغاز میں میں سابق سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ کوفی عنان کے انتقال پر دکھ کا اظہارکیا۔ انہوں نے کہا کہ آج دنیا ایک دوراہے پر کھڑی ہے، آج عالمی اصول متزلزل دکھائی دیتے ہیں، موسمیاتی تبدیلی،ماحولیاتی تنزلی، بین الاقوامی جرائم کی روک تھام میں مشکلات درپیش ہیں۔اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان اپنی خود مختاری اور قومی مفادات پر سمجھوتا نہیں کرے گا، پاکستان قومی مفادات اور سلامتی کے تحفظ پر کسی سودے بازی کا متحمل نہیں ہو سکتا۔ پاک بھارت تعلقات کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ بھارتی وزیر اعظم مودی نے سیاست کو امن پر فوقیت دی۔ خطے کے امن کی راہ میں مسئلہ کشمیر سب سے بڑی رکاوٹ ہے، مسئلہ کشمیر کے حل کے بغیر امن قائم نہیں ہوسکتا، دہشت گردی کی آڑ میں بھارت کشمیر میں مزید مظالم نہیں ڈھا سکتا۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارتی قابض افواج نہتے شہریوں پر چڑھائی کرتے آئی ہیں، بھارت کو ہمارے صبر کا امتحان نہیں لینا چاہیے، آزاد جموں کشمیر میں کمیشن کو خوش آمدید کہیں گے۔ رپورٹ کی سفارشات پر جلد عمل درآمد کی سفارش کرتے ہیں، یہ رپورٹ پاکستان کے مؤقف کی تائید کرتی ہے۔انہوں نے کہا کہ بھارتی ایماء پر پاکستان میں دہشت گردوں کی مالی معاونت اور منصوبہ بندی کی گئی، اے پی ایس اور مستونگ حملے کے دہشت گردوں کو بھارتی پشت پناہی حاصل تھی۔

شاہ محمود نے خطاب کرتے ہوئے بھارت کا چہرہ بے نقاب کرتے ہوئے کہا کہ کلبھوشن نے بھارتی حکومت کی ایماء پر پاکستان میں دہشت گردی کی پلاننگ کی، ہم تمام واقعات کے ثبوت بھارت اور اقوام متحدہ سے شیئر کرنا چاہتے تھے۔ پاکستان اسلحے کی دوڑ کم کرنے کیلئے بھارت سے بات کرنے کیلئے تیار ہے۔شاہ محمود قریشی نے افغانستان میں داعش کی عمل داری کو باعثِ تشویش قرار دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور افغانستان کافی عرصے سے بیرونی قوتوں کی غلط فہمیوں کا نشانہ بنتے آ رہے ہیں، پاکستان طویل عرصے سے غیر ملکی پناہ گزینوں کی میزبانی کرتا آیا ہے۔

وزیر خارجہ نے یو این اجلاس میں تقریر کرتے ہوئے کہا آج دنیا ایک دوراہے پر کھڑی ہے، آج عالمی اصول متزلزل دکھائی دیتے ہیں، تجارتی جنگ کے گہرے بادل افق پر نمودار ہیں، مشرقِ وسطیٰ کے حالات تشویشناک ہیں، مسئلہ فلسطین آج بھی اپنی جگہ موجود ہے۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہالینڈ میں خاکے بنانے کے منصوبے سے تمام مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی، ناموسِ رسالتﷺ پر مسلم امہ کو شدید ٹھیس پہنچی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان سلامتی کونسل میں اصلاحات کی کوشش کرتا رہے گا، پاکستان عالمی امن مشن میں حصہ لینے والا ملک ہے، پاکستان آزادی سے لے کر اب تک اقوامِ متحدہ کے منشور کا پاس دار ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستانی عوام نے ایسے پاکستان کے حق میں فیصلہ سنایا جو امن پسند ہے، پاکستانی عوام نے تبدیلی اور اصلاح پسندی کو ووٹ دیا، عمران خان کی قیادت میں نئے پاکستان کی داغ بیل ڈالی جا رہی ہے، پاکستان اقوام عالم کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہتا ہے۔

Comments are closed.

Scroll To Top