تازہ ترین
وزیر اعظم عمران خان کا کام نہ کرنے والے وزراء کو نکالنے کا عندیہ

وزیر اعظم عمران خان کا کام نہ کرنے والے وزراء کو نکالنے کا عندیہ

پشاور: (14 دسمبر 2018) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے عوام کے پیسے پر بادشاہت کے نظام کا خاتمہ کررہے ہیں۔ عوام کا پیسہ عوام پر خرچ کرنا چاہیے۔ تمام وزراء کو روز دفتر جانا چاہیے اور شام تک بیٹھنا چاہیے۔ جو وزیر کام نہیں کرے گا، اس سے وزارت واپس لے لی جائے گی۔

خیبرپختونخواہ حکومت کی 100 روزہ کارکردگی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستانی دنیا میں سب سے زیادہ خیرات اور سب سے کم ٹیکس دیتے ہیں۔ قوم کو جو بھی حکومت کرے، اس پر نظر رکھنی چاہیے۔

یہ ویڈیو دیکھنے کیلئے پلے کا بٹن دبائیے

انہوں نے کہا کہ کرپشن عوام کا پیسہ چوری کر کے کی جاتی ہے۔ صرف اسلام آباد میں قبضہ گروپوں سے ساڑھے تین سو ارب کی زمین چھڑوائی ہے۔ یہ عوام کی زمین ہے جس پر مافیاز نے قبضہ کیا ہوا تھا۔

عمران خان نے کہا کہ ساڑھے اکیس کروڑ پاکستانیوں میں صرف 72 ہزار لوگ ہیں جو دو لاکھ کی انکم دکھاتے ہیں۔ یہ ملک ایسے نہیں چل سکتا۔ ہم نے لوگوں کو اعتماد دینا ہے کہ عوام کا پیسہ مغل اعظم طرز زندگی پر خرچ نہیں ہوگا۔انہوں نے کہا کہ امریکہ جو پاکستان سے ڈومور کہتا تھا اب کہہ رہا ہے کہ طالبان سے بات چیت میں مدد کی جائے۔ پاکستان نے امریکہ اور افغانستان کی بات چیت کروائی ہے۔ اگر افغانستان میں امن قائم ہوگیا تو پشاور تجارت اور سیاحت کا حب بن جائے گا۔

وزیراعظم نے کہا کہ قلعہ بالا حصار کو پشاور میں سیاحت کا مرکز بنایا جائے گا اور ایف سی کو اس کے متبادل جگہ دے دی جائے گی۔ پشاور دنیا کے قدیم ترین شہروں میں شمار ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایگزون 27 برس بعد پاکستان میں سرمایہ کاری کررہا ہے اور ایگزون نے سمندر میں ایک جگہ دیکھی ہے جہاں ڈرلنگ کی جائے گی۔ اس حوالے سے ایگزون کا کہنا ہے کہ اگر یہاں سے گیس دریافت ہوگئی تو آئندہ پچاس برس کیلئے پاکستان کا گیس کا مسئلہ حل ہوجائے گا۔عمران خان نے کہا کہ فاٹا میں جلد از جلد ترقی کیلئے سب سے پہلے ہیلتھ کارڈ دیں گے تاکہ فاٹا کے لوگ اپنا علاج کروا سکیں۔ قبائلی علاقوں کا پاکستان میں انضمام آسان کام نہیں ہے، ہم ان علاقوں کی ترقی کیلئے ایک روڈ میپ دے رہے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ بلدیاتی نظام میں تحصیل ناظم کا الیکشن براہ راست کروائیں گے جس سے ایک مضبوط بلدیاتی نظام وجود میں آئے گا۔ سرکار ی اسپتالوں کو بھی پرائیویٹ اسپتالوں کی سطح پر لے کر آنا چاہتے ہیں۔ دو ہیلتھ سیکریٹری نجی اسپتالوں کے مافیا کے ساتھ مل کر ہمارے پروگرام کو سبوتاژ کررہے تھے، اس لیے میں وزراء سے کہتا ہوں کہ کوئی بیوروکریٹ اگر کام نہیں کرتا تو اس کے خلاف ایکشن لیا جائے، اس کونکال دیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ ابھی ادارے ٹھیک کرنے کیلئے ہماری ٹیمیں بن رہی ہیں۔ ہماری پارٹی پنجاب اور مرکز میں پہلی دفعہ اقتدار میں آئی ہے۔ تھوڑ ا سا صبر کرلیں، اس ملک میں پیسے کی کمی نہیں ہوگی۔انہوں نے کہا کہ ہم نے پاکستان میں دس ارب درخت لگانے کا فیصلہ کیا اور اس پر بہت زبر دست کام ہوا ہے۔ گلوبل وارمنگ ایک بہت بڑا خطرہ ہے۔ ہم سارے پاکستان میں دس ارب درخت لگائیں گے اور اس کیلئے کے پی ماڈل کو مدنظر رکھا جائے گا۔

عمران خان نے کہا کہ نوجوانوں کیلئے سپورٹس گراﺅنڈ بنانا بہت ضروری ہے، اس لیے ہمارے لیے ضروری ہے کہ نوجوانوں کو اسپورٹس گراﺅنڈ بنا کردیں۔ اس پر کوئی زیادہ پیسہ خرچ نہیں ہوتا۔ حکومت کی زمینوں کو کھیلوں کے میدانوں اور پارکس میں تبدیل کیا جائے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت بھاشاڈیم کے ساتھ مہمند ڈیم بھی بنا رہی ہے۔ مہمند ڈیم بننے سے پشاور کا پانی کا مسئلہ حل ہوجائے گا۔ اب پنجاب اور کے پی کے میں پانی کی ایک اتھارٹی بنادی گئی ہے جس کا مقصد یہ ہے کہ ہم نے پانچ سال میں پاکستان کے تمام لوگوں کو پینے کا صاف پانی دینا ہے۔عمران خان نے کہا کہ میں نے اب تک صرف تین چھٹیاں لی ہیں۔ وزراء پوری محنت کریں، میں ان کو تین ماہ کا وقت دے رہا ہوں۔

وزیراعظم عمران خان نے مزید کہا کہ تعلیم کے شعبے کیلئے مزید کام کرنے کی ضرورت ہے، یکساں نصاب تعلیم سے پاکستان ترقی کرے گا۔ ملکی تاریخ میں امیر اور غریب کے درمیان فرق بڑھتا گیا، غریبوں کیلئے سرکاری اسپتال بنے اور امیروں کیلئے نجی اسپتال۔ ہم نے غریب طبقے کو اوپر اٹھانا ہے، امیر اور غریب میں فرق ختم کرنا ہوگا۔

یہ بھی پڑھیے

ہاتھ پھیلانے والا ملک کبھی آگے نہیں بڑھ سکتا، عمران خان

عمران خان کا ہر ماہ کاروباری سہولیات کے جائزے سے متعلق اجلاس بلانے کا فیصلہ

 

Comments are closed.

Scroll To Top