تازہ ترین
نقیب اللہ قتل کیس :سپریم کورٹ کو راؤانوار کاایک اور خط موصول

نقیب اللہ قتل کیس :سپریم کورٹ کو راؤانوار کاایک اور خط موصول

اسلام آباد د(14مارچ، 2018)چیف جسٹس ثاقب نثار نے بتایاہے انھیں معطل  پولیس آفسرراؤانوار کا ایک اور خط موصول ہواہے انھوں نے یہ بات  سپریم کورٹ میں  نقیب اللہ قتل از خود نوڑس کیس کی آج کی سماعت کے موقع پر بتائی۔ 

چیف جسٹس ثاقب نثارکی سربراہی میں سپریم کورٹ کے3 رکنی بینچ نے نقیب اللہ قتل ازخود نوٹس کیس کی سماعت کی ۔ چیف جسٹس نے کہا کہ راؤ انوار کا ایک اور خط آیا ہے، معلوم نہیں خط اصلی ہے یانقلی، خط میں راؤ انوار نے بینک اکاؤنٹ بحال کرنے کالکھا ہے۔۔ان کاکہناتھا کہ پولیس رپورٹس تو مل رہی ہیں لیکن کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ہے.

ویڈیودیکھنے کےلیے پلے کابٹن دبائیں

سماعت میں عدالت کے معاون وکیل فیصل صدیقی نے بتایا کہ نقیب اللہ کیس میں 24 ملزمان میں سے10 لوگ ہی گرفتار ہوئے ہیں جس سے ریاست کی اتھارٹی پر سوال اٹھ رہے ہیں۔

ڈپٹی اٹارنی سہیل محمود نے کہا کہ سیکیورٹی اداروں کے مطابق کیس کے تمام مشتبہ افراد نے موبائل فون نمبر بند کردیے ہیں۔

چیف جسٹس نے آئی جی سندھ اللہ ڈنو خواجہ سے استفسار کیا کہ کیا ایم آئی اورآئی ایس آئی آپ کی معاونت کررہے ہیں،آئی جی سندھ نے کہا کہ دونوں ادارے معاونت کررہے ہیں،12 ملزمان گرفتارہوچکے ہیں، باقی ملزمان کی گرفتاری کی کوشش کررہے ہیں،مقدمے کا چالان بھی داخل کردیا ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کیا راؤ انوارسیاسی پناہ میں نہیں ہے،یہ ایک بڑا سوال ہے۔جس پر آئی جی سندھ نے کہا کہ بطورذمہ دار افسر وہ یہ نہیں کہہ سکتے کہ راؤانوار سیاسی پناہ میں ہے، اتنا کہہ سکتا ہوں کہ وہ ہمارے صوبے میں نہیں ،اس کی آخری لوکیشن بھیرہ تھی۔

چیف جسٹس نے آئی جی سندھ کو راؤانوارکی کراچی اور اسلام آباد میں موجودگی سے متعلق سی سی ٹی وی فوٹیج پران کیمرا بریفنگ دینے کا حکم دیتے ہوئے آئندہ سماعت پر ڈائریکٹر جنرل ائیرپورٹس سیکیورٹی کو بھی طلب کرلیا۔ کیس کی سماعت 16 مارچ تک ملتوی کر دی گئ.

یہ بھی پڑھیے:

نقیب اللہ قتل کیس: گرفتار ڈی ایس پی 7 روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

نقیب اللہ قتل کیس: گرفتار ڈی ایس پی 7 روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

Spread the love

Comments are closed.

Scroll To Top