تازہ ترین
قومی اسمبلی اجلاس:وزرات داخلہ کا نمائندہ نہ ہونے پراسپیکرکا برہمی کااظہار واحتجاج

قومی اسمبلی اجلاس:وزرات داخلہ کا نمائندہ نہ ہونے پراسپیکرکا برہمی کااظہار واحتجاج

اسلام آباد(13مارچ،2018) قومی اسمبلی اجلاس کے دوران چیئرمین سینیٹ کے انتخاب کا معاملہ گرم رہا، کیپٹن محمد صفدر کی دھواں دار تقریر پر پیپلز پارٹی کی شازیہ مری نے جوابی ردعمل دیا جبکہ محمود اچکزئی نے بلوچستان حکومت تبدیل کرنے کی تحقیقات کا مطالبہ کیا ۔

قومی اسمبلی کا اجلاس اسپیکر ایاز صادق کی زیر صدارت ہوا ۔ اجلاس کے دوران وزارت داخلہ کا کوئی نمائندہ موجود نہ ہونے پر اسپیکر برہم ہو گئے ۔ وزیر داخلہ اور سیکرٹری داخلہ کی عدم حاضری پر اسپیکر نے احتجاجاً چیئر چھوڑ دی اور چیئر ڈپٹی چیئرمین کے حوالے کر دی ۔

ویڈیودیکھنے کےلیے پلے کابٹن دبائیں

سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ سے متعلق نقطہ اعتراض پر بات کرتے ہوئے پختونخواہ ملی عوامی پارٹی کے محمود اچکزئی نے کہا کہ سینیٹ انتخابات میں زر اور زور سے ملک کی بنیادیں ہلا دی گئیں ۔ بلوچستان حکومت تبدیل کرنے والوں کو منظر عام پر لایا جائے ۔

ڈپٹی اسپیکر نے نقطہ اعتراض بحث میں بدلا تو جماعت اسلامی کے صاحبزادہ طارق اللہ نے کہا کہ کل جو کچھ سینیٹ میں ہوا اس سے جمہوریت داغ دار ہوئی ۔ بحث میں حصہ لیتے ہوئے ن لیگ کے محمد صفدر نے کہا کہ ایک متنازعہ فیصلے نے ہمیں گھر بھیجا ۔ ذوالفقار بھٹو کا نظریہ ہمیں اپنے پاس رکھنا چاہئے ۔ یہ نظریہ کسی ایسے شخص کے پاس نہیں ہونا چاہئے جو کسی کے قدموں میں بیٹھ جائے ۔پی پی پی  کی شازیہ مری نے جواباً کہا کہ اگر ذوالفقار بھٹو کی قدر کی جاتی تو آج پاکستان کا چہرہ مختلف ہوتا ۔ آج بھٹو کی بات کرنے والے کل ضیاء الحق کی قبر پر پھول چڑھاتے رہے ہیں، سینیٹ الیکشن میں جمہوریت پسندوں کی فتح ہوئی جبکہ بلوچستان کو نمائندگی ملنا بڑی کامیابی ہے ۔

آج کے سیشن میں حلقہ بندیوں پر اعتراضات دور کرنے کے لئے قومی اسمبلی کی کمیٹی قائم کر دی گئی ۔ کمیٹی میں تمام جماعتوں کے نمائندے شامل ہوں گے ۔ قومی اسمبلی کا اجلاس کل صبح ساڑھے دس بجے تک ملتوی کر دیا گیا ہے ۔

یہ بھی پڑھیے:

قومی اسمبلی اجلاس: فوجداری قانون (ترمیمی) بل سمیت کئی اہم قرارداد منظور

چار سالوں میں قومی ایئر لائن میں 18 طیارے شامل کئے گئے، پارلیمانی سیکریٹری قومی اسمبلی

Comments are closed.

Scroll To Top