تازہ ترین
عمران خان، شاہد خاقان اور عائشہ گلالئی اسکروٹنی کے لئے ایک ساتھ طلب

عمران خان، شاہد خاقان اور عائشہ گلالئی اسکروٹنی کے لئے ایک ساتھ طلب

اسلام آباد: (18 جون، 2018) اسلام آباد کے حلقے این اے53 کے امیدواروں کی کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال کے لیے عمران خان، شاہد خاقان اور عائشہ گلالئی کو ایک ساتھ طلب کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق چیئرمین تحریک انصاف عمران خان، سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور پی ٹی آئی کی منحرف رکن عائشہ گلالئی نے عام انتخابات کے لیے اسلام آباد کے حلقہ این اے 53 سے بھی کاغذات نامزدگی جمع کرائے ہیں۔

ریٹرننگ افسر کی جانب سے امیدواروں کی اسکروٹنی کل کی جائے گی، اس سلسلے میں آر او نے عمران خان، عائشہ گلالئی اور شاہد خاقان عباسی کو کل ایک ہی دن ذاتی حیثیت میں طلب کیا ہے۔چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کے کاغذات نامزدگی پرعبدالوہاب بلوچ نے اعتراضات دائرکر رکھے ہیں اس لیے چیئرمین پی ٹی آئی کو کاغذات کی جانچ پڑتال کے ساتھ اعتراضات کا جواب دینا ہوگا جب کہ عمران خان کے وکلا عید سے قبل اعتراضات کی نقول حاصل کرچکے ہیں۔

حلقہ این اے 53 سے 63 امیدواروں نے کاغذات نامزدگی جمع کرائے ہیں جن میں مسلم لیگ (ن) کے بیرسٹر ظفر اللہ، مہتاب عباسی اور پی ٹی آئی کے الیاس مہربان بھی شامل ہیں۔واضح رہےکہ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے لاہور کے حلقہ این اے 131 اور کراچی کے حلقہ این اے 243 سے بھی کاغذات نامزدگی جمع کرائے ہیں جب کہ ان کے خلاف بھی اعتراضات دائر کیے گئے ہیں۔

دوسری جانب پاکستان تحریک انصاف نے سابق اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کی نااہلی کیلئے ریٹرننگ افسر سے رجوع کرلیا ہے۔ ڈاکٹریاسمین راشد نے سردار ایازصادق کے کاغذات نامزدگی پر بارہ اعتراضات فائل کردیئے ہیں۔ڈاکٹر یاسمین راشد نے سردار ایاز صادق کی نااہلی کیلئے ریٹرنگ افسر کے دفتر میں بارہ اعتراضات جمع کروادیئے، جس کے مطابق ایاز صادق سپریم کورٹ کی جانب سے جاری کیے گئے بیان حلفی میں درج معلومات دینے میں ناکام ثابت ہوئے جبکہ سردار کیمیکل انڈسٹری کی ملکیت کے بھی کاغذات نہیں لگائے۔درخواست گزار کے مطابق ایاز صادق بیشتر قیمتی گاڑیوں کے مالک ہے لیکن کسی بھی گاڑی کے ڈاکومنٹس ظاہر کیے اور نہ ہی غیر سرکاری فارن ٹورز اور ان کے اخراجات کے بارے میں تفصیلات درج کیں۔

درخواست گزار کے مطابق امیدوار نے جان بوجھ کر تعلیمی ریکارڈ بھی  ظاہر نہیں کیا۔ ایاز صادق کمرشل پراپرٹیز کے مالک ہیں اور ان کی بیوی نے ایک کروڑ 30 لاکھ کا قرض عدنان علی کو دیا۔ کاغذات نامزدگی میں اس کے آمدنی کے ذرائع نہیں بتائے گئے کہ پیسے کہاں سے آئے۔ جبکہ انہوں نے ذاتی گھر کی تفصیلات بھی ظاہر نہیں کیں۔ڈاکٹر یاسمین راشید نے ریٹرننگ افسر سے استدعا کی کہ امیدوار کو آرٹیکل 62، 63 پر پورا نہ اترنے پر نااہل قرار دیا جائے۔

یہ بھی پڑھیے

چوہدری نثار کے کاغذات نامزدگی کے خلاف اعتراض خارج

الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ (ن) کے اعتراضات مسترد کردیئے

 

درخواست گزار کے مطابق ایاز صادق بیشتر قیمتی گاڑیوں کے مالک ہے لیکن کسی بھی گاڑی کے ڈاکومنٹس ظاہر کیے اور نہ ہی غیر سرکاری فارن ٹورز اور ان کے اخراجات کے بارے میں تفصیلات درج کیں۔

درخواست گزار کے مطابق امیدوار نے جان بوجھ کر تعلیمی ریکارڈ بھی  ظاہر نہیں کیا۔ ایاز صادق کمرشل پراپرٹیز کے مالک ہیں اور ان کی بیوی نے ایک کروڑ 30 لاکھ کا قرض عدنان علی کو دیا۔ کاغذات نامزدگی میں اس کے آمدنی کے ذرائع نہیں بتائے گئے کہ پیسے کہاں سے آئے۔ جبکہ انہوں نے ذاتی گھر کی تفصیلات بھی ظاہر نہیں کیں۔ڈاکٹر یاسمین راشید نے ریٹرننگ افسر سے استدعا کی کہ امیدوار کو آرٹیکل 62، 63 پر پورا نہ اترنے پر نااہل قرار دیا جائے۔

یہ بھی پڑھیے

چوہدری نثار کے کاغذات نامزدگی کے خلاف اعتراض خارج

الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ (ن) کے اعتراضات مسترد کردیئے

 

 

 

Comments are closed.

Scroll To Top