تازہ ترین
سیکریٹری سندھ اسمبلی کا قومی خزانے پر ڈاکا، 2 کروڑ 34 لاکھ ہڑپ لیے

سیکریٹری سندھ اسمبلی کا قومی خزانے پر ڈاکا، 2 کروڑ 34 لاکھ ہڑپ لیے

کراچی: (19 مارچ 2018) سیکریٹری سندھ اسمبلی غلام عمر فاروق برڑو نے من پسند 58 افسران و ملازمین  کے نام پر 2 کروڑ 34 لاکھ روپے ہڑپ لیے۔

سندھ اسمبلی کا مقدس ایوان بھی کرپٹ عناصر سے نہ بچ سکا۔ سیکریٹری سندھ اسمبلی نے اپنے اسسٹنٹ حبیب اللہ سمیجو اور او ایس ڈی ہارون کے ساتھ مل کر ڈاکا ڈالا اور من پسند 58 افسران و ملازمین کے نام پر 2 کروڑ 34 لاکھ  ہڑپ لیے ہیں۔

سندھ اسمبلی سیشن کے نام پر اصل رقم کے علاوہ دو کروڑ 34 لاکھ نکلوائے گئے۔ لاکھوں روپے اعزازیہ خود ہڑپ کرلیا۔ 2017ء میں 77 دن اجلاس کے نام پر خزانے کو بے رحمی سے لوٹا گیا۔دستاویزات کے مطابق سیکریٹری غلام عمر فاروق برڑو نے سیشن کا معاوضہ 2 لاکھ 69 ہزار کی جگہ 7 لاکھ 66 ہزار اور 6 لاکھ اعزازیہ بھی لیا۔ گریڈ 19 کے رپورٹر سید محمد علی کو 2 لاکھ 60 ہزار کی جگہ ساڑھے 7 لاکھ اور 4 لاکھ اعزازیہ دیا گیا۔

سیکریٹری کے اپنے اسسٹنٹ اور ڈی ڈی او پاور رکھنے والے چہیتے حبیب سمیجو کو ڈیڑھ لاکھ کی جگہ سوا 6 لاکھ اور 5 لاکھ اعزازیہ دیا۔

سندھ اسمبلی کے چھوٹے ڈان ہارون نے ایک لاکھ 30 ہزار کی جگہ 4 لاکھ 34 ہزار اور سوا 3 لاکھ اعزازیہ بھی ہڑپ کرلیا۔ ثناء رحمان ٹوانہ کو ایک لاکھ 20 ہزار کی جگہ 4 لاکھ 10 ہزار اور 3 لاکھ 25 ہزار اعزازیہ ملا۔ اسٹاف افسر عبدالستار مہر، رضیہ سلطانہ، عزیزاللہ چانگ، مالہی کے نام پر بھی رقم نکلوائی گئی۔سیشن کے مد میں اصل معاوضہ صرف 42 لاکھ بنتا تھا مگر ایک کروڑ 50 لاکھ اضافی نکلوائے گئے۔ اضافی رقم کے ساتھ 32 افسران و ملازمین کے اعزازیے کے نام پر 70 لاکھ الگ سے ہڑپ کئے گئے۔ سب سے زیادہ رقم سیکریٹری، رپورٹرز، او ایس ڈی اور دیگر نے لی۔ سیکریٹری نے اپنے اسسٹنٹ کو سرکاری خزانے کا انچارج بنا کر رقم آسانی سے لوٹی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ چھوٹے ملازمین کے نام سے نکالی گئی رقم ان کے اکاؤنٹس میں جمع ہونے کے بعد بڑے افسران نے واپس لے لی۔

یہ بھی پڑھیے

سندھ اسمبلی میں تاریخ کی بڑی کرپشن سامنے آگئی

میٹرو ملتان کرپشن کیس میں پیشرفت، منصوبے کی اراضی کا ریکارڈ نیب کے حوالے

 

Comments are closed.

Scroll To Top