تازہ ترین
سیپرا سائبر کریپشن اسکینڈل میں ایک اور بڑا انکشاف

سیپرا سائبر کریپشن اسکینڈل میں ایک اور بڑا انکشاف

کراچی: (12 ستمبر 2017) سیپرا سائبرکرپشن اسکینڈل میں ایک اور بڑا انکشاف ہوا ہے، سیپرا مافیا نے کراچی پیکیج کو بھی نہ بخشا، 10 ارب کے اہم منصوبوں کی آئی ڈیز چھپانے کا انکشاف سامنے آگیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سیپرا مافیا کو آئی ڈیز چھپانے کے عوض کروڑوں رپے رشوت نوری آباد اور صنعتی ایریاز کی بینکوں سے دی گئی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ سیپرا کی آئی ٹی ایکسپرٹ کو مخصوص کاموں کی آئی ڈیز چھپانے کے احکامات واٹس ایپ پر دیئے جاتے تھے۔

ویڈیو دیکھنے کیلئے پلے کا بٹن دبائیے

ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ کراچی پیکیج کے 10 ارب کے منصوبوں میں پلوں، سڑکوں اور انڈر پاسز کی تعمیر سمیت مختلف کام شامل تھے، ذرائع کے مطابق سابق کمشنر کراچی اور ان کے بھائی کی کمپنی کو نوازا گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق کمشنر کراچی کے بھائی اور دیگر نے ایم ڈی اختر بگٹی کو خصوصی ٹاسک دیکر تعینات کروایا تھا۔ سندھ کے متاثرہ ٹھیکیداروں نے مطالبہ کیا ہے کہ ایم ڈی سیپرا اختر بگٹی، جاوید مہر، عمران اخلاق، فرمان شاہ اور دیگر کے اثاثوں کی چھان بین کی جائے۔

ویڈیو دیکھنے کیلئے پلے کا بٹن دبائیے

واضح رہے گذشتہ روز سیپرا سائبر کرپشن کے معاملے پر سندھ کے متاثرہ ٹھیکداروں نے سیپرا مافیا کے خلاف نیب جانے کا فیصلہ کیا تھا، ٹھیکیداروں کا کہنا تھا کہ سیپرا کی جانب سے آئی ڈیز چھپانے کے عوض کروڑوں روپے لئے جاتے ہیں، پیسے طارق روڈ کے فلیٹ اور گلشن حدید میں لئے جاتے تھے۔

ٹھیکیداروں کا مزید کہنا تھا کہ صرف جیکب آباد میں پونے ایک ارب کا ٹھیکہ چھپایا گیا ہے۔ ٹھیکیداروں نے سوال کیا ہے کہ راتوں رات ایگزیکیوٹو انجینئر جاوید شیخ کو کیوں تعینات کیا گیا؟ 2010 میں سوشل میڈیا پر چیزیں بیچنے والا عمران اخلاق چند برسوں میں کروڑ پتی کیسے بن گیا ہے؟

یہ بھی پڑھئے

سیپرا سائبر کرپشن: ٹھیکیداروں کا مافیا کیخلاف نیب جانے کافیصلہ

کراچی: سیپرا میں سائبر کرپشن کا معاملہ، اب تک کی خبر پر نوٹس

Comments are closed.

Scroll To Top