تازہ ترین
سینیٹ میں مالیاتی ترمیمی بل 2018ء پیش کردیا گیا

سینیٹ میں مالیاتی ترمیمی بل 2018ء پیش کردیا گیا

اسلام آباد: (18 ستمبر 2018) ایوان بالا میں اپوزیشن کے شور شرابے اور ہنگامہ آرائی میں مالیاتی ترمیمی بل 2018ء پیش کردیا گیا ہے۔ اپوزیشن اراکین نے گیس کی قیمتوں میں اضافہ واپس لینے کا مطالبہ کردیا۔

چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی زیرصدارت سینیٹ اجلاس کے آغاز پر نو منتخب سینیٹر سرفراز احمد بگٹی نے حلف اٹھایا۔ سینیٹر حاصل بزنجو نے حفیظ بلوچ پر تشدد کا معاملہ سینیٹ میں اٹھایا۔ اپوزیشن نے وزیر اعلیٰ بلوچستان کے مقابلے میں انتخاب لڑنے والے امیدوار حفیظ بلوچ پر تشدد کے خلاف احتجاجاً سینیٹ سے واک آؤٹ کیا۔

چیئرمین سینیٹ نے حفیظ بلوچ پر تشدد کی رپورٹ طلب کرلی اور وزیرمملکت برائے داخلہ کو ہدایت کی کہ اس پرسینیٹ میں رپورٹ پیش کی جائے۔اپوزیشن کے واک آؤٹ کے دوران وزیر خزانہ اسد عمر نے ضمنی مالیاتی ترمیمی بل 2018ء سینیٹ میں پیش کیا۔

پیپلزپارٹی کی سینیٹر شیری رحمان نے گیس کی قیمتوں میں اضافہ اور ضمنی مالیاتی بل پر حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ رات کے اندھیرے میں 143 فیصد گیس کی قیمتیں بڑھائی گئیں۔ سو دن میں سو لطیفے تو نہیں ہونے چاہئیں۔ تحریک انصاف منی بجٹ خود ہی پیش کر دے۔سینیٹر جاوید عباسی نے کہا کہ بھینسیں بیچنے سے معیشت مستحکم نہیں ہوگی۔ حکومت گیس کے نرخوں میں اضافہ فوری واپس لے۔ ڈیم کے معاملے پر عوام کو ٹرک کی بتی کے پیچھے لگا دیا گیا ہے۔

مولانا عبدالغفور حیدری نے ڈیم فنڈ اکٹھا کرنے اور اسپتالوں پر چھاپے مارنے پر چیف جسٹس کو ہدف تنقید بنایا۔ چیئرمین سینیٹ نے مولانا عبدالغفور کو چیف جسٹس کے بارے میں بولنے سے روک دیا۔ مولانا عبدالغفور حیدری اور سینیٹر ستارہ ایاز سمیت دیگر سینیٹرز نے متنازعہ کالاباغ ڈیم کی تعمیر کی مخالفت کی۔وزیر مملکت برائے پارلیمانی امور علی محمد خان نے سینیٹ کو بتایا کہ انتخابات میں تحفظات سے متعلق پارلیمانی کمیٹی بن گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

حکومت نے منی بجٹ پیش کردیا، موبائل فون پر ڈیوٹی بڑھادی گئی

خواجہ آصف نے (ن) لیگ کے سینیٹ اجلاس سے واک آؤٹ کی وجہ بتادی

 

Comments are closed.

Scroll To Top