تازہ ترین
سینیٹ انتخابات: الیکشن کمیشن نے (ن) لیگ کی درخواست مسترد کردی

سینیٹ انتخابات: الیکشن کمیشن نے (ن) لیگ کی درخواست مسترد کردی

اسلام آباد: (22 فروری 2018) الیکشن کمیشن نے سینیٹ انتخابات کے حوالے سے مسلم لیگ (ن) کی درخواست مسترد کردی۔

الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ (ن) کو سینیٹ الیکشن سے آوٹ کرتے ہوئے پارٹی کے نئے ٹکٹس سے متعلق درخواست مسترد کردی ہے۔ الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ امید وار آزا د حیثیت میں سینیٹ الیکشن لڑ سکتے ہیں۔

یہ ویڈیو دیکھنے کیلئے پلے کا بٹن دبائیے

سپریم کورٹ نے گذشتہ روز انتخابی اصلاحات کیس کے فیصلے میں نوازشریف کو پارٹی صدارت کیلئے نااہل قرار دیا تھا اور ساتھ ہی ان کے بطور پارٹی صدر کیے گئے فیصلوں کو بھی کالعدم کردیا تھا۔

عدالتی فیصلے کے بعد نوازشریف کے بطور پارٹی صدر سینیٹ انتخابات کیلئے امیدواروں کو دیئے گئے ٹکٹس بھی منسوخ ہوگئے۔

نون لیگ نے امیدواروں کو نئے پارٹی ٹکٹ جاری کردئیے

اس سے قبل نواز شریف کو پارٹی صدارت کیلئے سپریم کورٹ کی جانب سے نا اہل قرار دیئے جانے کے بعد چیئرمین (ن) لیگ نے سینیٹ امیدواروں کو نئے ٹکٹ جاری کردیئے۔

ذرائع کے مطابق اس بات کا فیصلہ پنجاب ہاؤس میں ہونے والی مشاورتی اجلاس میں کیا گیا، جس پر فوری عمل کرتے ہوئے چیئرمین پاکستان مسلم لیگ (ن) راجہ ظفرالحق نے سینیٹ الیکشن میں حصہ لینے والے امیدواروں کو بحیثیت چیئرمین نئے ٹکٹ جاری کیے۔

اس موقع پر راجہ ظفر الحق نے کہا کہ اب میرے نام سے سینیٹ انتخابات کے ٹکٹ جمع کرائے جائیں گے، کیونکہ پارٹی آئین کے مطابق چیئرمین کو ٹکٹس جاری کرنے کا اختیار موجود ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں مسلم لیگ (ن) کے چیئرمین راجہ ظفر الحق، وزیر کیڈ طارق فضل چوہدری اور انوشہ رحمان الیکشن کمیشن روانہ ہوگئے ہیں۔

یاد رہے کہ گذشتہ روز سپریم کورٹ نے انتخابی اصلاحات کیس کے فیصلے میں نواز شریف کو پارٹی صدارت سے نااہل کرتے ہوئے ان کے پارٹی صدر رہتے ہوئے تمام احکامات بھی کالعدم قرار دیئے تھے۔سپریم کورٹ نے اپنے مختصر فیصلے میں الیکشن کمیشن کو بھی ہدایات کی تھی کہ نواز شریف کا نام پارٹی صدر کے عہدے سے ہٹائیں جس پر عملدرآمد کرتے ہوئے الیکشن کمیشن کی ویب سائٹ پر ان کا نام ہٹادیا تھا اور مسلم لیگ (ن) کے پارٹی صدر کا عہد ہ خالی ہے۔
الیکشن کمیشن (ن) لیگ کو اس اقدام سے بذریعہ خط آگاہ کرے گا اور انہیں دوبارہ پارٹی صدر کیلئے انتخابات کروانے کا کہا جائے گا۔

نواز شریف پارٹی صدارت کیلئے بھی نااہل قرار

قبل ازیں سپریم کورٹ نے انتخابی اصلاحات 2017ء کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے نوازشریف کو پارٹی صدارت کیلئے بھی نااہل قرار دے دیا۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے انتخابی اصلاحات ایکٹ میں ترمیم کے خلاف دائر درخواستوں پر سماعت کی۔

یہ ویڈیو دیکھنے کیلئے پلے کا بٹن دبائیے

سماعت مکمل ہونے کے بعد چیف جسٹس نے کہا کہ ہم ساڑھے 4 بجے دوبارہ آئیں گے اور بتائیں گے کہ مختصر حکم دینا ہے یا فیصلہ کرنا ہے۔

عدالتی فیصلے میں کچھ دیر کی تاخیر ہوئی اور سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے 6 بجے کے قریب فیصلہ سنانا شروع کیا اور چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار نے فیصلہ سنایا۔چیف جسٹس نے نوازشریف کو پارٹی صدارت کے لیے نااہل قرار دیتے ہوئے فیصلہ دیا کہ آرٹیکل 62 اور 63 پر نہ اترنے والا شخص پارٹی صدارت نہیں رکھ سکتا۔

عدالتی فیصلے میں نوازشریف کے بطور پارٹی صدر اٹھائے گئے اقدامات کو بھی کالعدم قرار دیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

سینیٹ انتخابات: (ن) لیگ نے امیدواروں کو نئے پارٹی ٹکٹ جاری کردئیے

سپریم کورٹ نے نوازشریف کو پارٹی صدارت سے نااہل قرار دے دیا

 

Spread the love

Comments are closed.

Scroll To Top