تازہ ترین
سابق بھارتی وزیراعظم کی حالت تشویشناک، انتہائی نگہداشت یونٹ منتقل

سابق بھارتی وزیراعظم کی حالت تشویشناک، انتہائی نگہداشت یونٹ منتقل

نئی دہلی:(16 اگست 2018) بھارت کے سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کی حالت نازک ہے۔ جس کی وجہ سے وہ زندگی اور موت کی کشمکش میں مبتلا ہیں۔

بھارتی میڈیا کے مطابق بھارت کے دو مرتبہ وزیر اعظم بننے والے ترانوے سالہ اٹل بہاری واجپائی کی حالت تشویشناک ہے۔ جس کی بنا پر اسپتال انتظامیہ نے انہیں انتہائی نگہداشت یونٹ میں منتقل کر دیا ہے۔ وہ گیارہ جون سے آل انڈیا انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز میں زیر علاج ہیں۔

بھارتی وزیراعظم نریندر مودی بھی اٹل بہاری واجپائی کی عیادت کے لیے اسپتال پہنچے۔ جہاں انہوں نے سابق وزیراعظم کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں سے بات چیت کی۔ اس موقع پرمرکزی وزیر صحت اور خاندانی بہبود جے پی نڈا بھی موجود تھے۔واضح رہے کہ سابق بھارتی وزیر اعظم کو رواں ماہ جون میں انہیں اسپتال داخل کرایا گیا تھا جہاں ڈاکٹروں نےان کی سانس کی نالی میں انفیکشن بتایا ، اس کے ساتھ ہی ان کے گردوں سے متعلق بھی بیماری کی تشخیص کی گئی تھی۔ گزشتہ ہفتے، بی جے پی کے صدر امیت شاہ اور یونین کے وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے بھی ان کی عیادت کی تھی۔

واضح رہےاٹل بہاری واجپائی نے انیس سو چالیس میں سیاست میں قدم رکھا اور انیس سو بیالیس کی ”بھارت چھوڑو“ تحریک میں پرجوش حصہ لیا، تحریک کی شدت کو دیکھ کر تحریک کے شرکاء کو پکڑا جانے لگا تو اٹک بہاری واجپائی بھی گرفتار ہو گئے اور انہیں چوبیس دنوں کی قید بھگتنی پڑی۔اٹل بہاری واجپائی دو مرتبہ ملک کے وزیر اعظم رہے۔ پہلی مرتبہ سولہ مئی انیس سو چھیانوے سے یکم جون انیس سو چھیانوے یعنی پندرہ دن کے وزیر اعظم رہے۔ دوسری مرتبہ انیس مارچ انیس سو اٹھانوے سے بائیس مئی دو ہزار چار تک بھارتی کے وزیر اعظم کی ذمہ داریاں نبھا چکے ہیں۔

اٹل بہاری واجپائی ملک کے صف اول کے سیاسی رہنما کے ساتھ ہندی کے عمدہ شاعر بھی ہیں۔ سیاسی مصروفیات میں بھی انہوں نے شاعری کو اپنے سینے سے لگائے رکھا۔ واجپائی جنہیں اعتدال پسند قائد کہا جاتا ہے انہوں نے اپنی شاعری میں بھی اپنے ان جذبات کی ترجمانی کی ہے۔ اپنے طویل سیاسی سفر میں واجپائی نے وقت کے ہر سلگتے مسئلے پر نظمیں تحریر کی ہیں۔

Spread the love

Comments are closed.

Scroll To Top