تازہ ترین
حکومت کا ایک اور منی بجٹ لانے پر غور

حکومت کا ایک اور منی بجٹ لانے پر غور

اسلام آباد:(19 دسمبر 2018) حکومت نے ایک اور منی بجٹ لانے پر غور شروع کر دیا ہے، جس کے تحت نئے ٹیکس نافذ کئے جانے کا امکان ہے۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد میں وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ منی بجٹ میں کئی مصنوعات پر ٹیکس اور ٹیرف میں اضافے کی تجویز ہے، ابھی مختلف تجاویز زیر غور، کوئی حتمی فیصلہ نہیں ہوا، درآمدی خام مال پر ٹیکس ریٹ میں کمی بھی ہو سکتی ہے، جنوری میں نیا بل پارلیمنٹ میں لے کر جا سکتے ہیں۔

وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر نے اعتراف کیا کہ آئی ایم ایف کے پاس جانا افسوس ناک ہے، ان شاء اللہ یہ پاکستان کا آخری آئی ایم ایف پروگرام ہوگا۔ساتھ ہی انہوں نے وضاحت کی کہ سوشل میڈیا پر وائرل عمران خان کا آئی ایم ایف کے پاس نہ جانے کا بیان 2014 کا ہے، وزیراعظم نے الیکشن سے پہلے ٹی وی شو میں کہا تھا کہ آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑسکتا ہے۔

انہوں نے کہا اسٹاک مارکیٹ میں 5 ماہ کے دوران 5000 پوائنٹ کی کمی ہوئی، امریکا، بھارت اور چین سمیت دیگر مارکیٹس بھی گریں۔

اسد عمر کا کہنا تھا سعودی عرب سے آئل فیسلیٹی جنوری سے شروع ہو جائے گی، سعودی عرب سے اگلے 3 سال ماہانہ 27 کروڑ ڈالرز کا تیل ادھار ملے گا، سعودی عرب سے قرض کی مجموعی رقم 6 ارب ڈالرز ہوگی۔ انہوں نے کہا متحدہ عرب امارات سے مذاکرات بھی آخری مراحل میں ہیں، یو اے ای سے چند دنوں میں معاملات طے پا جائیں گے۔

یہ بھی پڑھیے

ملک میں کوئی اقتصادی بحران نہیں ہے، معاشی خلا پورا کر چکے، اسد عمر

جہانگیر ترین نے اسد عمر کے ساتھ اختلافات کی تردید کردی

Comments are closed.

Scroll To Top