تازہ ترین
نواز شریف کا قطری شہزادے کے خطوط سے لاتعلقی کا اظہار

نواز شریف کا قطری شہزادے کے خطوط سے لاتعلقی کا اظہار

اسلام آباد: (15 نومبر 2018) سابق وزیراعظم نوازشریف نے العزیزیہ اسٹیل مل ریفرنس میں آج مزید 45 سوالوں کے جوابات جمع کرادیئے ہیں۔ دو روز میں سابق وزیر اعظم نے عدالت کی جانب سے پوچھے گئے 151 میں سے 90 سوالات کے جوابات دے دیئے ہیں۔

سابق وزیراعظم نوازشریف آج دوسرے روز بھی بیان ریکارڈ کرانے احتساب عدالت پہنچے۔ خواجہ حارث کے  عدالت دیر سے پہنچنے پر کارروائی تاخیر سے شروع ہوئی۔

سماعت کے آغاز پر نواز شریف نے احتساب عدالت کی جانب سے پوچھے گئے سوالات کے تحریری جواب میں کہا کہ 1999ء کے مارشل لاء کے بعد شریف خاندان کے کاروبار کا تمام ریکارڈ ایجینسیوں نے اپنی تحویل میں لے لیا جس کے خلاف متعلقہ تھانے میں درخواست بھی دی لیکن کوئی کارروائی نہ ہوئی۔انہوں نے کہا کہ جلاوطنی کے دنوں میں نیب نے خاندانی رہائش گاہ کو تحویل میں لیا اور چوہدری شوگر ملز سے 110 ملین اور رمضان شوگر ملزسے 5 ملین روپے نکلوا لیے جو واپس نہیں کیے گئے۔ حالانکہ لاہور ہائیکورٹ نیب کے ان اقدمات کو کالعدم قرار دے چکی ہے۔

نواز شریف نے کہا کہ جج صاحب ہمارے ساتھ یہ صرف 1999ء میں نہیں ہوا بلکہ یہ ہمیشہ ہوتا آیا ہے، ہمارے خاندان کی درد بھری کہانی ہے۔ جنوری 1972ء میں اتفاق فاؤنڈری کو قومیا لیا گیا۔

سابق وزیراعظم نے اپنے جواب میں کہا کہ جے آئی ٹی کے دس والیم محض ایک تفتیشی رپورٹ ہے لیکن کوئی قابل قبول شہادت نہیں۔ میرے ٹیکس ریکارڈ کے علاوہ جے آئی ٹی کی طرف سے پیش کی گئی کسی دستاویز کا میں گواہ نہیں۔انہوں نے کہا کہ ٹیکس ریکارڈ میں نے خود جے آئی ٹی کو فراہم کیا تھا اور میرے خلاف شواہد میں ایم ایل ایز پیش کیے گئے۔ سعودی عرب سے ایم ایل اے کا کوئی جواب ہی نہیں آیا جبکہ متحدہ عرب امارات سے آنے والا ایم ایل اے کا جواب درست مواد پر مبنی نہیں۔

نوازشریف نے مزید کہا کہ یہ کہنا درست نہیں کہ سعودی عرب میں ہمارے پاس وسائل یا پیسہ نہیں تھا۔ حقیقت یہ ہے کہ میرے والد نے پیسوں کا انتظام کیا اور خاندان کے افراد کی ضروریات کو پورا کیا۔

نواز شریف نے قطری شہزادے کے خطوط سے لاتعلقی کا اظہار کر دیا۔ نواز شریف کے تحریری بیان کو ریکارڈ کا حصہ بنادیا گیا۔

احتساب عدالت کی جانب سے سابق وزیراعظم سے مجموعی طور پر 151 سوالات پوچھے گئے ہیں، جبکہ نواز شریف نے 90 سوالوں کے جوابات قلمبند کروائے۔ جس کے بعد العزیزیہ اسٹیل مل ریفرنس کی سماعت کل تک، جبکہ فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت پیر تک ملتوی کردی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

نوازشریف نے العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں مزید 45 جوابات دے دیئے

العزیزیہ ریفرنس میں گواہان کے بیانات ریکارڈ کرنے کا سلسلہ مکمل

العزیزیہ ریفرنس میں گواہان کے بیانات ریکارڈ کرنے کا سلسلہ مکمل

Comments are closed.

Scroll To Top